You are here: مقالاجات اسرائیلی عدالت سے فلسطینی اسیرہ کو دو سال قید کی سزا
 
 

اسرائیلی عدالت سے فلسطینی اسیرہ کو دو سال قید کی سزا

E-mail Print PDF

0Pala9426الخلیل - (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) مقبوضہ فلسطینی شہر بئر سبع میں قائم اسرائیل کی ایک عدالت نے زیرحراست فلسطینی خاتون کو دو سال قید کی سزا سنائی ہے۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق غزہ کی پٹی سے تعلق رکھنے والی 59 سالہ اسیرہ ابتسام موسیٰ کو اسرائیلی فوج نے 19 اپریل 2017ء کو اپنے سرطان کے مریض بھائی کے ساتھ غرب اردن جاتے ہوئے حراست میں لے لیا گیا تھا۔

خیال رہے کہ ابتسام موسیٰ اسرائیلی زندانوں میں قید تمام فلسطینی اسیرات میں عمر میں بڑی ہیں۔

ادھر اسرائیلی فوج نے گذشتہ روز غرب اردن کے جنوبی شہر الخلیل سے فلسطینی شہری حسین جویلس کو حراست میں لے لیا۔ عینی شاہدین نے بتایا کہ صیہونی فوج نے جویلس کو گرفتاری کے وقت وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنایا۔

کلب برائے اسیران کی خاتون مندوبہ جاکلین فرارجہ نے بتایا کہ اسرائیلی فوج نے 28 سالہ اسیر ھیثم جمیل عوض کو عصیون جیل میں دوران حراست تشدد کا نشانہ بنایا۔ فرارجہ کا کہنا ہے کہ عوض کی آنکھوں پر پٹی باندھ کر اسے زنجیروں میں جکڑا گیا اور اس کے بعد ہولناک اذیتیں دی گئیں۔