You are here: غزہ یوم القدس پرغزہ میں مظاہرے،اسرائیلی حملوں میں دو فلسطینی شہید،600 زخمی
 
 

یوم القدس پرغزہ میں مظاہرے،اسرائیلی حملوں میں دو فلسطینی شہید،600 زخمی

E-mail Print PDF

0Pala10570غزہ (فلسطین نیوز۔مرکز اطلاعات) فلسطین کےعلاقے غزہ کی پٹی میں آج جمعہ کے روز ’عالمی یوم القدس‘ کے موقع پر لاکھوں افراد نے مشرقی سرحد کی طرف مارچ کیا۔ اس موقع پر اسرائیلی فوج کی طرف سے نہتے مظاہرین پر طاقت کا اندھا دھند استعمال کیا گیا جس کے نتیجے میں کم سے کم دو فلسطینی شہری شہید اور چھ سو زخمی ہوگئے ہیں۔

فلسطین نیوز کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق بزدل قابض صیہونی فوج نہتے فلسطینی مظاہرین پر ڈرون طیاروں کے ذریعے آنسوگیس کی شیلنگ، براہ راست فائرنگ اور دھاتی گولیوں کا استعمال کررہی ہے جس کے نتیجے میں دو فلسطینی شہید اور سیکڑوں زخمی ہوگئے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق جمعہ کے روز نماز جمعہ کے بعد لاکھوں فلسطینیوں نے مشرقی سرحد کی طرف مارچ کیا۔ اس موقع پر صیہونی فوج نے فلسطینی ریلیوں پر انسوگیس کی شیلنگ کی اور فائرنگ کے ساتھ دیگر مجرمانہ ہتھکنڈے استعمال کیے۔ اسرائیلی دہشت گردی میں 25 سالہ زیاد البریم اور 26 سالہ نبیل ابو درابی جام شہادت نوش کرگئے جب کہ چھ سو کے قریب زخمی ہوئے ہیں جن میں سے دس کی حالت خطرے میں بیان کی جاتی ہے۔

ابلاغی ذرائع کے مطابق زخمی ہونے والوں میں پانچ صحافی بھی شامل ہیں جو مشرقی غزہ میں القدس ملین مارچ کی کوریج کررہے تھے کہ اسرائیلی فوج کی گولیوں کا نشانہ بن گئے۔ زخمی صحافیوں میں فرانسیسی خبر رساں ایجنسی’اے ایف پی‘ کے فوٹو گرافر محمد البابا اور صوت الاقصیٰ ٹی ی کے نامہ نگار اسماعیل ابو عمر بھی شامل ہیں۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ جمعہ کو علی الصباح فلسطینیوں کی بڑی تعداد مشرقی غزہ میں سرحد کے قریب جمع ہونا شروع ہوگئی تھی۔ اسرائیلی فوج نے شہریوں کو احتجاج سے دور رکھنے کے لیے ان کے خیموں پر آتش گیر بم برسائے جس کے نتیجے میں احتجاجی خیموں میں آگ بھڑک اٹھی۔